Ye Deys // یہ دیس

Event (76).jpg
 

ye deys khudai tuhfa, faqat muslim ki meeraas hai

aqaliyatain yahan har dam khauf-o-hiras ka shikar hain

ghair muslimon ko tou choryey, kuch muslim bhi yahan kuffar hain

gojra jal rahe hain, mard-e-momin khamosh hain

masaawaat jamhooriat ye maghribi aqdar hain

jo inhen ham pe musallat karay - ghaddar hai! kuffar hai!

 

hubb-ul-watani, qaumi jazba dunya aaye ham se seekhe

aadha mulk ganwa dia, jo bach gaya barbad hai

roti pani bijli eendhan iss deys mein nayab hai

sharh-e-taaleem hamari, sharamnak hai

likin apni har dushwari berooni haath ka kaam hai

jo iss se inkaar karay - ghaddar hai! kuffaar hai!

 

rishwat, jhoot, fareb har roz ka mamool hai

aurat par zulm-o-jabar har tabqay ka asool hai

kyun nahin hain ik hi saf mein mahmood o ayaz idhar?

gareeb mar mar k jeeta hai ameer aali shan hai

jo kahta hai sabz na ho ga khait ye shamsheer ka?

ghaddaar hai! kuffaar hai!

agent, istemar hai!

beyrooni angaar!

seyhooni fankar!

maghrib fitnawaar!

hindustan jangbardar!

ham tou muslim bakirdar!

ham kese hon qusoorwaar?

sajda nasheen rehte hain ham roz o shab

kar rahe hain sadiyon se kisi mahdi ka intezar

mat hamari aankhen kholo, mat karo ham par tanqeed

ham hain khuda kay banday purisrar

tum ghaddar! tum kuffar!

یہ دیس خدائی تحفہ، فقط مسلم کی میراث ہے
اقلیتیں یہاں ہر دم خوف و ہراس کا شکار ہیں
غیر مسلموں کو تو چھوڑْیے، کچھ مسلم بھی یہاں کفار ہیں
گوجرہ جل رہے ہیں، مردِ مومن خاموش ہیں
مساوات، جمہوریت، یہ مغربی اقدار ہیں
جو ان کو ہم پر مسلط کرے، غدار ہے کفار ہے

حبّ الوطنی، قومی جذبہ، دنیا آئے ہم سے سیکھے
آدھا ملک گنوا دیا، جو بچ گیا برباد ہے
روٹی پانی بجلی ایندھن اس دیس میں نایاب ہے
شرحِ تعلیم ہماری شرمناک ہے
لیکن اپنی ہر دشواری بیرونی ہاتھ کا کام ہے
جو اس سے انکار کرے، غدار ہے کفار ہے


رشوت جھوٹ فریب ہر روز کا معمول ہے
عورت پر ظلم و جبر ہر طبقے کا اصول ہے
کیوں نہیں ہیں اک ہی صف میں محمود و ایاز ادھر؟
غریب مر مر کے جیتا ہے، امیر عالی شان ہے
جو کہتا ہے سبز نہ ہو گا کھیت یہ شمشیر کا
غدار ہے، کفار ہے
ایجنٹ، استعمار ہے
بیرونی انگار
صیہونی فنکار
مغرب فتنہ وار
ہندوستان جنگ بردار
ہم تو مسلم باکردار
ہم کیسے ہوں قصوروار؟
سجدہ نشیں رہتے ہیں ہم روزوشب
کر رہے ہیں صدیوں سے کسی مہدی کا انتظار
مت ہماری آنکھیں کھولو، مت کرو ہم پر تنقید
ہم خدا کے بندے پراسرار
اور تم، تم غدار، تم کفار